دوستو جوکر کا رول پچھلی کئی دہائیوں سے کئی بہترین اداکار کرتے آئے ہیں۔ جن میں انتہائی نامور جیک نکلسن، آنجہانی ہیتھ لیجر، مارک ہیمل اور پھر ہواکوئن فینکس ہیں۔ یہ تمام اداکار اپنے لحاظ سے بہترین اداکار ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جس نے بھی اس کردار کو کرنے کی کوشش کی اسکو اس کردار میں ڈوبنا پڑا اور کافی عرصے تک یہ کردار انکی حقیقی زندگی کا حصہ بھی رہا۔ ہیتھ لیجر کی موت اور اسکا solitude میں چلے جانا یہ بتاتا ہے کہ اس کردار کو واقعی میں سائیکوپاتھ بن کر کرنا پڑتا ہے۔ جیک نکلسن کی بھی فلموگرافی دیکھیں تو ون فلیو اوور دا ککو’ز نیسٹ میں ایک پاگل شخص کا کردار کرنے والا ہی بعد میں جوکر کا رول بھی کر پایا۔ بہرحال نکلسن کا کردار اتنا پذیرائی حاصل نہ کر سکا کیونکہ اسکو ایک انتہائی لمٹڈ سکرین ٹائم ملا۔ لیکن جوکر اس معاشرے میں ایک سائیکوپاتھ کی خصوصیات رکھتا ہے جو سسٹم کو اپنے نظریے سے دیکھتا ہے۔ اور لوگوں کے اندر ابھرتے انتشار کو کیش کرنا جانتا ہے۔ اس کردار کی تفصیل اور کیسے ڈی سی کامکس نے اسکی اوریجن سٹوری کو وقت کے ساتھ ساتھ بدلا۔ وہ پھر کسی پوسٹ میں لکھوں گا۔ ابھی مووی کے ریویو پر چلتے ہیں۔

gn gift guide variable c - جوکر2019 | فلم ریویو

SPOILER ALERT

کہانی کچھ یوں ہے کہ ارتھر فلیک نامی ایک غریب آدمی جو گوتھم سٹی ڈاون ٹاون میں اپنی ماں کے ساتھ رہتا ہے۔ ماں اور بیٹے دونوں کی دماغی حالت بھی ٹھیک نہیں ہوتی۔ آرتھر کو ایک دماغی بیماری ہوتی ہے جس میں جب وہ اداس ہونے پر ہنسنا شروع ہو جاتا ہے۔ اور گھر کے حالات انتہائی نامساعد ہونے کی وجہ سے وہ دکانوں کے باہر اور ہسپتالوں میں ایک مسخرے(clown) کی نوکری کرنے پر مجبور ہوتا ہے۔ اپنا کھانا بچا کر اپنی ماں کو کھلا دیتا تھا جس سے اسکی جسمانی حالت بھی کافی کمزور تھی۔ آرتھر کو سرکار کے غریبوں کیلئے سپورٹ پروگرام میں ادویات مفت مل جاتی تھیں لیکن انکا اثر آرتھر کو بالکل نہیں ہو رہا تھا۔ اسی دوران آرتھر کو کئی دفعہ گلیوں میں bully بھی کیا گیا۔ ایسے ہی ایک واقعہ میں خود کا دفاع کرتے ہوئے آرتھر سے گولی چل جاتی ہے۔ اور وہ تہرے قتل میں فرار ہوجاتا ہے۔ چونکہ آرتھر مسخرے کے بھیس میں ہوتا ہے تو قاتل کو کوئی پہچان نہیں پاتا۔ آرتھر ایک سٹینڈ اپ کامیڈین بننے کا سوچتا ہے اور ایک چھوٹے سے ریسٹورنٹ میں پرفارم کرتا ہے جہاں انتہائی ٹھنڈے اور ڈارک قسم کے لطیفے سناتا ہے جس پر کوئی نہیں ہنستا۔ آرتھر اور اسکی ماں ایک ٹی وی شو بہت شوق سے دیکھتے تھے۔ اتفاقاً اس ٹی وی شو میں آرتھر کی اس پرفارمنس کا کلپ چلتا ہے جس پر ہوسٹ (رابرٹ ڈی نیرو) آرتھر کی پرفارمنس کی اچھی خاصی بےعزتی کرتا ہے۔ آرتھر کو یہ بات بری لگتی ہے۔ آرتھر کی ماں کے پاس کچھ پولیس اہلکار تہرے قتل کی تفتیش میں پہنچتے ہیں جس پر اسکو وہیں دل کا دورہ پڑتا ہے۔ اس پوری سٹوری کے پیرالل میں ایک اور کہانی چل رہی ہوتی ہے جس میں تھامس ویئن گاتھم سٹی کا ایک امیر شخص ہوتا ہے۔ آرتھر کی ماں تھامس کی بہت معترف ہوتی ہے۔ ہر وقت ٹی وی اور اخبار پر تھامس ویئن کو کوریج دی جا رہی ہوتی ہے۔ تھامس گوتھم سٹی کا مئیر یا ناظمِ اعلیٰ کا امیدوار بھی ہوتا ہے جس پر پوری زور و شور کیمپین چلاتا ہے۔ اسی دوران آرتھر کی ماں اسکو بتاتی ہے کہ تھامس ہی اسکا اصل باپ ہے۔ آرتھر اپنے اندر اکیلے پن کی کیفیت کے ساتھ اب احساسِ کمتری بھی محسوس کرتا ہے کہ اسکا باپ امیر شخص اور عیش و آرام سے رہ رہا ہے لیکن میں یہاں غریبی مسکینی میں پڑا ہوا ہوں۔ وہ اپنے باپ سے ملنے جاتا ہے جو اسکو دھتکار دیتا ہے یہ کہہ کر کے تم اور تمہاری ماں دونوں dellusional ہو۔ خیالی باتیں کرتے ہو۔ تم میری اولاد نہیں ہو بلکہ لے پالک ہو۔ تیس سال پہلے کے ہسپتال ریکارڈز چیک کرلو۔ آرتھر چیک کرتا ہے تو یہ بات سچ نکلتی ہے۔ اور تھامس کی دماغی حالت کی وجہ بھی سمجھ آجاتی ہے کہ بچپن میں اس پر ڈھائے گئے ظلم کو وجہ سے وہ آج ایسا ہوا ہے۔ اسی دوران تہرے قتل میں آرتھر کو پولیس کی جانب سے ڈھونڈا جا رہا ہوتا ہے۔ اور عوام (جو پہلے سے غربت اور دوسرے مصائب کی وجہ سے مشکلات میں ہوتی ہے) میں قاتل کیلئے رحمدلی آنے کی وجہ سے انارکی پھیلنی شروع ہوجاتی ہے۔کیونکہ مقتولین ایک اپر مڈل کلاس کے لڑکے تھے۔ آرتھر کو اسی ٹی وی شو میں بلایا جاتا ہے جہاں اسکا کلپ چلایا گیا تھا۔ اور آرتھر وہاں جوکر کے روپ میں آکر اپنے انارکسٹ خیالات ظاہر کرتا ہے۔ تھامس ویئن کو شہر کیلئے ناسور قرار دیتا ہے اور کہتا ہے کہ کوئی میرا درد نہیں سمجھ سکتا۔ اسی بحث میں آرتھر ٹی وی ہوسٹ کو ماردیتا ہے۔ جس سے پورے شہر میں دنگے فساد شروع ہوجاتے ہیں۔ انارکسٹ لوگ شہر میں جوکر کا ماسک پہن کر گھروں سے نکل آتے ہیں اور شہر کو بند کردیتے ہیں۔ جوکر کو سٹوڈیو سے پولیس لے جاتی ہے جہاں راستے میں اسکے ہم خیال حامی اسکو پولیس سے چھڑوا لیتے ہیں۔ اور جوکر ایک تشدد پسند سوسائیٹی کا سرخیل بن کر ابھرتا ہے۔ اسی دنگے میں تھامس وئین اپنی فیملی کے ساتھ سینما سے باہر نکلتا ہے جہاں کوئی غنڈہ اسکو اور اسکی بیوی کو قتل کردیتا ہے۔ یوں جوکر گاتھم سٹی کے سب سے بڑے ولن کو طور پر ابھرتا ہے۔

356480149 1 1024x576 - جوکر2019 | فلم ریویو

ریویو

فلم کی کہانی انتہائی شاندار اور جاندار تھی۔ اور ڈی سی کامکس کے کردار جوکر سے بہت میچ بھی کرتی تھی۔ آپکو ایڈٹنگ میں شاید ہی کوئی جھول ملے۔ ورنہ ہوبز اینڈ شا(Hobbs and Shaw) دیکھ کر اتنا افسوس ہوا تھا کہ ہالی ووڈ اب بھی ایسی واہیات ایڈٹنگ بھی کرتا ہے۔ کیمرہ ورک بھی انتہائی کمال کا ہے۔کچھ سینز ایسے فلمائے گئے ہیں جو اپنے درجہِ کمال کو پہنچتے ہیں۔ بلاشبہ یہ اس سال کا آسکرز کیلئے ایک تگڑا امیدوار ثابت ہوگی۔ انفرادی طور پر ہواکوئن فینکس (Joaquin Pheonix ) نے ابھی تک جوکر کی بہترین پرفارمنس دی ہے۔ آنجہانی ہیتھ لیجر کے بعد شاید ہی لگتا تھا کہ کوئی اُس سے بہتر کرسکے مگر اس دفعہ تو بہت ہی اعلیٰ کام ہوا۔ ایک ایک ایکشن پر فوکس کیا گیا ہے۔ ہر ایکسپریشن اپنے پیچھے ایک پوری کہانی رکھتا ہے۔ اس کردار کیلئے کتنی محنت کی گئی ہوگی وہ تو imdb کی ریٹنگ 8.8 بھی بتا رہی ہے کہ یہ کتنا آوٹ آف دی باکس گیا ہے۔ باکس آفس پر ابھی تک یہ انتہائی کامیاب رہی۔ ستر اسّی ملین بجٹ ڈالر کے میں یہ ابھی تک تین دن میں دو سو چالیس ملین وصول کرچکی ہے۔ اسکو ہدائیتکار ٹوڈ فلپس اور اداکار و ہدائیتکار بریڈلے کوپر نے پروڈیوس کیا ہے۔ دونوں حضرات بذاتِ خود بھی اپنے فیلڈ میں یدِ طولیٰ رکھتے ہیں۔ میں اس فلم کو چھے سے سات کیٹگریز میں اکیڈمی ایوارڈز جیتتا دیکھ رہا ہوں۔ انشااللّٰہ

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here